26

کویت آنے کے خواہشمند غیرملکی متحدہ عرب امارات سے واپس گھروں کو لوٹنے لگے

ٹرانزٹ میں پھنسے افراد کی کویت آنے کی امیدیں دم توڑنے لگیں، کئی مسافر اپنے ممالک واپس لوٹ گئے۔ سفری پابندیوں کے بعد کویت آنے والے خواہشمند افراد کی تمام امیدیں ختم ہوگئی ہیں اور وہ اپنے آبائی ممالک واپس لوٹ رہے ہیں۔

حکومت کویت نے 7 فروری کو اعلان کیا تھا کہ تمام غیر کویتوں پر اگلے دو ہفتوں تک ملک میں داخلے پر پابندی ہے تاہم کویت کے ہوائی اڈے پر دو ہفتوں کی پابندی کے بعد غیر ملکیوں کا استقبال متوقع تھا لیکن اس سے دو گھنٹے قبل ڈائریکٹوریٹ جنرل سول ایوی ایشن (ڈی جی سی اے) نے ایک ٹویٹ میں اعلان کیا کہ اب غیر کویتی اگلا نوٹس آنے تک ریاست کویت میں داخل نہیں ہوسکتے۔

کویت ٹائمز کے مطابق ٹرانزٹ میں سینکڑوں کے قریب مسافر موجود ہیں خاص طور پر ہندوستان ، پاکستان، فلپائن اور مصر سے لوگ سفری پابندی کی وجہ سے دبئی میں پھنسے ہوئے ہیں۔

8 فروری کو ابو ظہبی میں بھارتی سفارتخانے نے اپنے شہریوں کو مشورہ دیا کہ متحدہ عرب امارات کے راستے کویت اور سعودی عرب کا سفر نہ کریں کیونکہ دونوں خلیجی ممالک نے نئے سخت سفری اقدامات نافذ کیے ہیں اس کے علاوہ سفارت خانے نے متحدہ عرب امارات میں پھنسے مسافروں کو وطن واپس جانے کا مشورہ بھی دیا۔

سفری پابندی ختم ہونے کی کوئی امید نہیں ہے جس کی وجہ سے بہت سے تارکین وطن نے اپنے ملکوں کو وطن واپس جانے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ مالی رکاوٹیں خلیجی ممالک میں ان کے قیام کی صلاحیت کو محدود کرتی جارہی ہیں۔

چونکہ بہت سے تارکین وطن کویت جانے سے قبل ہمسایہ ملکوں میں قرنطین کی غرض سے سفر کرتے ہیں لہذا انہیں 14 دن تک رہائش کی ادائیگی کرنا ہوتی ہے۔ ایئر لائن ویب سائٹ کے مطابق کویت سے پہلے کی قیمتوں کے مقابلہ میں دبئی ، شارجہ اور ابوظہبی سے کویت سے 185 کویتی دینار سے 680 دینار تک ہیں جبکہ کوویڈ 19 سے قبل ان ہوائی ٹکٹوں کی قیمت 24 دینار سے 41 دینار کے درمیان ہوتی تھی۔

پی سی آر ٹیسٹ اور ائیرپورٹ ٹرانسفر چارجز سمیت دبئی میں دو مسافروں کے لئے 14 دن کے قرنطین کی اوسط پیکیج کی قیمت 140 کویتی دینار کے لگ بھگ ہے۔ فروری کے بعد دبئی میں پھنسے ہوئے بہت سارے افراد نے سفری پابندی کے بعد ہوٹلوں یا رہائشی اجازت ناموں میں توسیع کرنے پر زیادہ ادائیگی کا بوجھ برداشت کیا ۔

مالی بوجھ کو دور کرنے کی کوشش میں دبئی میں کچھ خیراتی اداروں نے امارت میں پھنسے افراد اور کویت واپس جانے سے قاصر افراد کے لئے خدمات پیش کیں۔ متحدہ عرب امارات میں کچھ کمیونٹی گروپ متحدہ عرب امارات میں پھنسے ہوئے ہندوستانیوں کو مفت کھانا اور رہائش مہیا کررہے ہیں۔ جنوری اور فروری کے درمیان امارات میں متعدد رضاکار گروپوں سے لگ بھگ 600 ہندوستانیوں کی مدد ملی۔

گھریلو ملازمین جو آرٹیکل 20 ویزا کے تحت ہیں سفری پابندی سے مستثنیٰ ہیں اور بشرطیکہ وہ “بلسلامہ” ایپ میں رجسٹرڈ ہوں اور کویت کا سفر کرنے کے اہل ہوں۔ گھریلو ملازمین کو کویت واپس لے جانے کے لئے کویتی ایئر لائنز اور ایئر انڈیا اور سری لنکن ایئر لائنز جیسی قومی ایئر لائنز کے درمیان چارٹرڈ پروازوں کا انتظام کیا گیا ہے۔ گھریلو ملازمین کی آمد پر انہیں اپنے ہی خرچ پر کسی ہوٹل میں 14 دن قرنطین کرنے کی ضرورت ہوگی۔

بحوالہ: گلف نیوز ۔ کویت نیوز اردو

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں