166

کویت: پبلک پراسیکیوشن نے ویزہ تجارت کرنے والوں کے خلاف جرمانوں میں اضافے کا بل پیش کر دیا

ملک میں انسانی اسمگلنگ مسئلہ نہیں، ویزوں کی تجارت مسئلہ ہے۔

رپورٹ کے مطابق کویت میں انسانی اسمگلنگ اصل مسئلہ نہیں ہے بلکہ مزدوروں کی بھرتی بڑا مسئلہ بن چکا ہے جس کے پیش نظر 30 معاملوں میں ویزا کے تاجروں کو سزا سنائی گئی۔ انسانی اسمگلنگ اور ویزا کی تجارت میں فرق ہے اور ملک میں ویزوں کی تجارت ملک کے لئے ناسور بن چکی ہے۔

ذرائع نے وضاحت کی کہ اس درجہ بندی کی ایک اہمیت اور مفہوم ہے جن میں سے سب سے پہلے کویت کے نام کو انسانی اسمگلنگ کے خطرناک الزام سے بین الاقوامی سطح پر پاک کرنا ہے کیونکہ یہ تمام عدالتی احکامات سے ظاہر ہے کہ انسانی اسمگلنگ کا ملک میں کوئی وجود نہیں ہے۔

عدالتی فیصلوں سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ویزا ٹریڈنگ غیر ملکی کمپنیوں کے ذریعہ کی جاتی ہے جو جعلی کمپنیوں کے مالکان کے مفاد کے لئے کام کرتے ہیں اور اپنے شہریوں پر توجہ دیتے ہیں۔ شہریوں کو ملازمت کا لالچ دیکر پیسے لیتے ہیں اور ویزے بیچتے اور انہیں ویزا حاصل کرنے کے بدلے میں ملازمت سے دوچار کرتے ہیں۔

پیسوں کے عوض بیچے گئے ویزا کی اوسط قیمت 2،000 ہزار دینار تک پہنچ چکی ہے۔ ہزاروں کارکنوں کو لا کر سڑکوں پر پھینک دیا جاتا ہے جس کی وجہ سے کویت میں پسماندہ کارکنوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ کوویڈ 19 بحران کے دوران یہ انکشاف ہوا اور کئی معاملات منظرعام پر آئے۔ ذرائع نے بتایا کہ “رہائشی اجازت نامے کی اسمگلنگ کا یہ عمل شہریوں کے ذریعہ بھی انجام دیا جاتا ہے جو کمپنیوں کے مالک ہیں کیونکہ ان کی بنیادی پریشانی یہ ہے کہ جلدی سے امیر ہوجائیں۔ ناقص نگرانی کے ساتھ جعلی کمپنیوں کے ذریعے کارکنوں کی بھرتی کرنے کا رجحان بڑھ گیا ہے۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ پبلک پراسیکیوشن نے حال ہی میں ایک بل پیش کیا ہے جس میں اس نے ان الزامات کے لئے جرمانے میں اضافے کا مطالبہ کیا ہے کیونکہ مجرموں کو صرف چھوٹے جرمانے کی سزا دی جاتی ہے جو جرم کے مطابق نہیں ہیں تاہم طویل مطالعہ اور تحقیقات کے بعد ان امور پر تحقیقات کے بعد ایک بل پیش کیا گیا ہے تاکہ قانون کے احاطے میں آنے والی خامیوں کا تعین کیا جاسکے۔

ذرائع: ٹائمس

ذریعہ: کویت اردو نیوز

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں