144

کویت: ماہ رمضان میں خیراتی اداروں کی خدمات عروج پر، روزانہ ہزاروں مزدوروں میں کھانا تقسیم کیا جارہا ہے

ماہ رمضان میں خیراتی اداروں کی خدمات عروج پر ہیں۔ ہزاروں مزدوروں میں روزانہ کی بنیاد پر کھانا تقسیم کیا جارہاہے۔

ماہ رمضان کی آمد کے ساتھ ہی کویت میں روایتی انداز میں ضرورت مندوں کے لئے کھانوں اور افطاری کے انتظامات کئے جاتے ہیں۔ عوام تو اس کارخیر میں حصہ لیتی ہی ہے لیکن ملک کے خیراتی ادارے بھی ماہ رمضان کے ساتھ متحرک ہوجاتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق صدقہ جاریہ اور انسانیت سوز کاموں کے سلسلے میں خیراتی ادارے ماہ مقدس کے پہلے دن سے ہی بہت سے رہائشی علاقوں میں روزانہ کی بنیاد پر ہزاروں مزدوروں کو تیار کھانا تقسیم کررہے ہیں۔ ماہ رمضان کے پہلے عشرے کے اختتام تک 100،000 افطاری کے ڈبے تقسیم کئے گئے۔

وزارت سماجی امور سے وابستہ خیراتی اداروں کی جانب سے کھانوں کی باسکٹ اور افطاری کی تقسیم بڑے پیمانے پر منظرِ عام پر آئی جو رمضان کے دوران افطاری کے دسترخوان کا متبادل سمجھا جارہا ہے کیونکہ کورونا سے قبل عام طور پر خیراتی ادارے مزدوروں اور ضرورت مندوں کے لئے افطاری اور کھانوں کا باقاعدہ ہ اہتمام کرتے تھے۔

کچھ خاندانوں کو خریداری کے لئے میگنیٹک کارڈ تقسیم کرنے کے ساتھ ساتھ گھروں میں تیار کھانا پہنچانا بھی قابل ذکر خدمات ہیں

خیرات دینے والی کمیٹیوں نے ماہ رمضان سے قبل ہی اشیاء خردونوش کے ڈبے تقسیم کرنے کو ترجیح دی جبکہ دیگر انجمنوں نے اپنے ہیڈکوارٹر میں کھانا پہنچانے کے لئے ایک طریقہ کار اپنایا جس میں کسی گروپ یا نمائندے کی موجودگی میں کھانا وصول کرتے اور تقسیم کرنے کو ترجیح دی گئی۔

الزہرہ کے علاقے میں السلام خیراتی سوسائٹی نے ماہ رمضان کے آغاز سے ہی روزانہ کی بنیاد پر تقریبا 4000 کھانوں کی تقسیم کے علاوہ ایڈوانس بکنگ نظام کے ذریعہ 1،600 سے زیادہ تیار رمضان کھانے تقسیم کئے۔ کھانوں کی تقسیم وزارت داخلہ کے اہلکاروں کی موجودگی میں کی گئی۔

یہ مہم جو رضاکار ٹیموں نے خیراتی سوسائٹیوں اور وزارت داخلہ کے تعاون سے چلائی تھی اس میں خیطان ، جلیب الشیویخ ، فروانیہ ، الجہرہ ، کبد ، حولی ، تیما اور الصلیبیہ میں کارکنان کے رہائشی علاقوں کے علاوہ تجارتی مراکز اور کچھ مساجد میں بھی خدمات انجام دی گئیں۔

ال استقامت کے ڈائریکٹر نادر بن ضقلعہ نے تصدیق کی ہے کہ رمضان المبارک کے بابرکت مہینے کے آغاز سے 30 ہزار کھانا محتاجی خاندانوں اور کارکنوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔

بین الاقوامی اسلامی خیراتی آرگنائزیشن ٹیم کے ایک ممبر داؤد الخراز نے اپنے بیان میں خیطان میں صفائی کرنے والے کارکنوں کو ایک دن میں 300 کھانوں کی تقسیم کا انکشاف کیا۔ انجمنوں نے مزدوروں کے ایک گروپ کو مطلوبہ مقدار میں کھانا وصول کرنے اور ان تک پہنچانے کے لئے ایک نمائندہ فراہم کرکے اجتماعات کو روکنے کے لئے “امور” کے تقاضوں کا اطلاق کیا تاکہ تقسیم کے دوران کسی بھی قسم کے ہجوم اور اجتماعات کو روکنے کے لئے اقدامات کو فروغ دیا جاسکے۔

مہا القالاف کی سربراہی میں المہا رضاکار ٹیم نے تقسیم میں حصہ لیا جبکہ ایسوسی ایشن کے عملے نے فوڈ سروس فراہم کرنے والوں کے ساتھ معاہدے کے عمل کو منظم کرنے کے لئے کام کیا تاکہ کھانے میں چاول ، ایک قسم کا گوشت ، مٹھائی ، پھل اور لبن کو شامل کیا جاسکے۔

انجمنوں نے کھانے کی فراہمی پر مشتمل ہزاروں ٹوکریاں تقسیم کیں جس کی مالی قیمت فی ٹوکری 30 دینار سے کم نہیں ہے۔ رفاہی فیلڈ میں کارکنوں نے روزنامہ القبس کو بتایا کہ انجمنوں نے ٹوکریاں تقسیم کرنے کے لئے متعدد طریقے استعمال کیے جن میں سے پہلا یہ ہے کہ وہ انہیں اپنے گھروں کے اندر ضرورت مندوں تک پہنچایا جائے یا مقناطیسی کارڈ کے ذریعے جس میں ایسی رقم موجود ہو جس سے وہ مرکزی بازاروں سے اپنی ضرورت کے مطابق خریداری کرسکیں۔

ذرائع:القبس ۔ کویت اردو نیوز 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں