200

ایسے ڈرونز جن میں مسافر بھی بیٹھ سکیں گے

بڑے شہروں میں ٹریفک سے بچنے کے لیے کئی فضائی ذرائع نقل و حمل کا خیال پیش کیا جاچکا ہے، اب حال ہی میں ایک کمپنی نے مسافر بردار ڈرون طیاروں کا خیال بھی پیش کردیا ہے۔

ایک جرمن کمپنی وولو کاپٹر کی جانب سے کئی سال سے خود کار پرواز کی صلاحیت رکھنے والے مسافر بردار ڈرونز کی آزمائش کی جارہی تھی، اب اس کمپنی نے ایک اور کانسیپٹ ڈرون وولو کنکٹ متعارف کرایا ہے جو 4 مسافروں کو 64 میل تک کا سفر کروانے میں مدد فراہم کرے گا۔

کمپنی کے مطابق یہ ڈرون ہائبرڈ لفٹ کو استعمال کرے گا اور بجلی کی مدد سے پرواز کرے گا، اس ڈرون کی رفتار 111 میل فی گھنٹہ ہوگی۔ وولو کنکٹ میں 6 برقی موٹرز اور روٹرز موجود ہیں۔

کمپنی کے مطابق یہ ڈرون کسی شہر کے اندر طویل فاصلہ طے کرسکے گا اور لوگوں کو مطلوبہ منزل تک جلد پہنچا سکے گا۔

وولو کاپٹر کی سی ای او فلورین ریوٹر نے بتایا کہ یہ کانسیپٹ لوگوں کو کم قیمت، مؤثر اور مستحکم پرواز کے ذریعے دنیا بھر میں شہروں میں سواری فراہم کرنے کے مشن کو پورا کرنے میں مدد فراہم کرے گا۔

اس کمپنی نے سنہ 2020 کے آخر میں اولین کمرشل پروازوں کے لیے ریزرویشنز کو اوپن کیا تھا۔ اس بکنگ کے لیے 300 یورو یا 10 فیصد ڈپازٹ جمع کرنا ہوگا اور مسافروں کو 15 منٹ کی پرواز کا مزہ لینے کا موقع مل سکے گا۔

یہ پرواز ان جگہوں پر دستیاب ہوگی جہاں کمپنی کو کام کرنے کی اجازت ملے گی۔ اس وقت کمپنی کو یہ اجازت سنگاپور میں دی گئی ہے اور وولو کاپٹر آئندہ 3 برسوں کے اندر کسی وقت وہاں کمرشل سروس کا آغاز کرے گی۔

ذرائع: اے آر وائے نیوز اردو

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں