89

سعودیہ میں منشیات اسمگلنگ کی کوشش ناکام بنا دی گئی

مقامی شہری سے 292 کلوگرام چرس برآمد، ملزم کو منشیات کی کھیپ وصول کرتے رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے

سعودی عرب ایک اسلامی ملک ہے جہاں پر شرعی قانون نافذ ہیں۔ اسلامی ملک ہونے کے ناتے یہاں شراب اور منشیات کے استعمال کی بھرپور ممانعت ہے اور ان ممنوعہ اشیاء کی اسمگلنگ میں ملو ث افراد کا سر قلم کر دیا جاتا ہے۔ تاہم کچھ بدبخت ایسے بھی ہیں جو اس مقدس دھرتی کی حُرمت و پاکیزگی کا خیال نہیں رکھتے۔ مملکت میں منشیات منتقلی کی بڑی سازش ناکام بنا دی گئی ہے۔تفصیلات کے مطابق محکمہ انسداد منشیات نے ایک مقامی شہری کو منشیات اسمگلنگ اور منشیات فروشی کے الزامات کے تحت گرفتار کر لیا ہے۔سعودی محکمہ انسداد منشیات کے ترجمان محمد النجیدی نے بتایا کہ ایک مقامی شہری کو منشیات کی بڑی کھیپ کے ساتھ گرفتار کیا گیا ہے۔ ملزم کے بارے میں اطلاع ملی تھی کہ وہ مملکت میں منشیات فروشی کا دھندا وسیع پیمانے پر چلا رہا ہے۔جس کے بعد اس کی نگرانی شروع کی گئی۔

مخبروں کی جانب سے اطلاع دی گئی تھی کہ ملزم اگلے ایک دو روز میں چرس کی بڑی کھیپ وصول کرے گا۔ جس کے بعد اس پر لمحہ بہ لمحہ نظر رکھی گئی۔ جازان کی صبیا کمشنری میں ملزم نے جونہی منشیات اسمگلروں سے چرس کی 292 کلوگرام کھیپ وصول کی، اسی وقت تاک میں بیٹھے اینٹی نارکوٹکس کے اہلکاروں نے ملزم کو گرفتار کر لیا۔ملزم کے قبضے سے اسلحہ بھی برآمد ہوا ہے۔ واضح رہے کہ چند روز قبل سرحدی علاقے سے ایک ٹرک کے ذریعے لائی گئی ممنوعہ نشہ آور دوا ایم فیٹامین’ کی ستائیس لاکھ گولیاں پکڑ ی گئی تھی۔ سعودی اینٹی نارکوٹکس ڈیپارٹمنٹ کے ترجمان محمد النجیدی نے بتایا کہ منشیات اسمگلروں کی جانب سے بیرون ملک سے لائے گئے ایک ٹرک کی چھت میں 27 لاکھ 20 ہزار نشہ آور گولیاں چھپائی گئی تھیں۔تاہم ان افراد کی یہ کوشش ناکام بنا دی گئی ہے۔ اس کارروائی میں جدہ اسلامی بندرگاہ پر محکمہ زکوة، انکم ٹیکس اور کسٹمز حکام نے حصہ لیا۔ گرفتار کیے گئے ملزمان میں سے 2 سوڈانی، ایک شامی اور ایک پناہ گزین شامل ہے۔ ملزمان یہ منشیات مدینہ منورہ، الریاض اور جدہ منتقل کرنا چاہتے تھے۔ رمضان المبارک کے دوران مملکت میں شراب کی 21 ہزار سے زائد بوتلیں اسمگل کرنے کی کوشش سعودی کسٹمز نے ناکام بنا دی تھی۔اس کھیپ کے ساتھ بیئر کے 240 ڈبے بھی ضبط کیے گئے ہیں۔ اسمگلرز کی جانب سے بطحا کی سرحدی چوکی کے راستے یہ ہزاروں شراب کی بوتلیں زیتون کے تیل کے کارٹنوں میں چھُپا کر اسمگل کی جا رہی تھیں، تاہم مستعد اور ہوشیار کسٹمز اہلکاروں کے تلاشی لینے پر اسمگلنگ کی یہ غیر قانونی سرگرمی دھری کی دھری رہ گئی۔

ذرائع: اردو پوائنٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں