407

پاکستانی ویزہ پر عائد پابندی ختم، کویت کو اہل افراد کی فراہمی کے لیے تیار ہیں: وزیر داخلہ پاکستان

ہم کویت کو مختلف شعبوں میں اہل افراد کی فراہمی کے لئے تیار ہیں جبکہ “کوویڈ 19” کے خلاف جنگ میں کویت کی مدد کے لئے قریب 1000 پاکستانی طبی عملہ فراہم کریں گے: وزیر داخلہ پاکستان

تفصیلات کے مطابق پاکستانی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے انکشاف کیا ہے کہ کویت کے حکام نے 11 سال رکنے کے بعد پاکستانی شہریوں کو تجارتی اور فیملی ویزے جاری کرنے پر عائد پابندی ختم کردی ہے۔ انہوں نے وضاحت کرتے ہوئے کہا ہے کہ تیل اور بینکاری کے شعبوں میں تکنیکی ماہرین کے لئے ویزا منظور کرلیا گیا ہے۔ کویت میں اپنے دو روزہ سرکاری دورے کے دوران پاکستانی سفارتخانے میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں انہوں نے کہا کہ کسی بھی خلیجی ملک کا جائز اقامہ رکھنے والے پاکستانی شہری کویت کی وزارت داخلہ کی ویب سائٹ کے ذریعے الیکٹرانک ویزا حاصل کرسکیں گے۔ اس کے علاوہ کویتی حکام کی جانب سے اس بات کی بھی یقین دہانی کرائی گئی ہے کہ جتنی جلدی ہو سکے دیگر تمام اقسام کے ویزوں کی بحالی پر بھی غور کیا جائےگا۔

انہوں نے اس بات کی نشاندہی کی کہ پاکستان کویت کو مختلف شعبوں میں اپنی صلاحیتوں کی فراہمی کے لئے تیار ہے۔ انہوں نے ڈاکٹروں اور نرسوں سمیت تقریبا 1000 پاکستانی طبی اہلکاروں کی مزید دو کھیپوں کی کویت میں آمد کی طرف اشارہ کرتے ہوئے “کوویڈ 19 کے خلاف جنگ میں کویت کی حمایت کی ہے اور اس بات کا بھی اشارہ کیا کہ کویت مزید پاکستانی ڈاکٹروں کو لانے میں دلچسپی رکھتا ہے۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ وبائی مرض کی روشنی میں ان کے ملک کی صورتحال انتہائی تسلی بخش ہے کیونکہ پاکستانی حکام نے تمام دکانیں اور تجارتی مارکیٹیں کھول رکھی ہیں جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ان کا ملک محفوظ ہے جبکہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کی فہرست میں پاکستان عالمی سطح پر 42 نمبر پر ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ “جب دونوں ممالک کے مابین سفر کی نقل و حرکت مستقل ہو جانے کے بعد 72 پاکستانی قیدیوں کو منتقل کیا جائے گا اور کویت کے اندر قید کی سزا ان کے ملک میں دی جائے یہ بات نوٹ کرتے ہوئے کہ قیدیوں کی کل تعداد میں 6 فیصد نے واپسی کی خواہش کا اظہار کیا ہے۔

سلامتی سے متعلق امور کے سلسلے میں دونوں ممالک کے مابین رابطہ کے بارے میں سوال کے جواب میں شیخ رشید نے کہا کہ ” مجھے لگتا ہے کہ خطہ ترقی کی راہ پر گامزن ہے، خلیج کے اتحاد کو بحال کرنے اور علاقائی امور کو حل کرنے میں کویت کی عظیم کوششوں کی تعریف کرتے ہوئے تمام ممالک کے درمیان علاقائی استحکام کے حصول کے لئے سلامتی کی صورتحال بہتر ہوگی۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے اسلامی قوم کی کوششوں کو متحد کرنے کی ضرورت پر زور دیا تاکہ وہ اس کے آس پاس موجود تمام چیلنجوں کا مقابلہ کرسکیں۔ انہوں نے اس طرف اشارہ کیا کہ انہوں نے اپنے کویت کے ہم منصب سے مشترکہ مفاد کے متعدد امور پر تبادلہ خیال کیا نیز سیکیورٹی کے شعبے میں باہمی تعاون اور تقویت کے ساتھ ساتھ خاص طور پر دونوں ممالک کی وزارت داخلہ کی وزارتوں کے مابین معلومات اور تجربات کے تبادلے کے شعبے میں باہمی تعاون کے طریقہ کار پر تبادلہ خیال کیا۔

مقبوضہ فلسطینی علاقوں میں جو کچھ ہورہا ہے اس کے بارے میں اپنے ملک کے موقف کے بارے میں انہوں نے فلسطینی مقصد کے لئے اپنے ملک کی حمایت کی توثیق کرتے ہوئے کہا کہ “پاکستانی عوام فلسطین کے لئے اس قدر جذباتی ہے کہ پاکستانیوں کی بڑی تعداد فلسطینی عوام کی مدد کے لئے فلسطین جانا چاہتی ہے”۔ انہوں نے اس طرف بھی اشارہ کیا کہ مسئلہ فلسطین اور مسئلہ کشمیر اسلامی قوم کو درپیش سب سے نمایاں چیلنج ہیں۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ ان کے ملک اور خلیجی ریاستوں کے مابین تعلقات اسوقت اپنے بہترین مراحل میں ہیں اس وجہ سے کہ ان کے ملک کی اس اہمیت پر یقین ہے کہ اس خطے میں خلیجی ریاستوں کا کیا کردار ہے۔

ذرائع: کویت اردو نیوز

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں