168

سعودیہ میں سائنو فام ویکسین پر پابندی ہٹائے جانے کا امکان ہے

پابندی ہٹنے سے لاکھوں پاکستانیوں کی واپسی ممکن ہو سکے گی

سعودی حکومت کی جانب سے صرف چار ویکسینز لگوانے والے افراد کو مملکت میں داخلے کی اجازت دی گئی ہے۔ یہ ویکسینز فائزر، موڈرنا، آکسفورڈ کی ایسٹرا زینیکا اور جانسن اینڈ جانسن شامل ہیں تاہم پاکستان میں اس وقت سرکاری سطح پر صرف سائنو فام اور سائنو ویک ویکسینز لگائی جا رہی ہیں۔ جس کی وجہ سے پاکستان میں پھنسے سعودی ویزہ ہولڈرز کی مملکت جانے کی راہ ہموار نہیں ہو رہی ہے۔اس کے علاوہ پاکستان سے عمرہ اور حج کے لیے جانے کے خواہش مندوں کی پریشانی بھی بڑھ رہی ہے کہ وہ سعودیہ کی منظور شدہ ویکسینز کہاں سے لگوائیں،جو پاکستان میں اگر دستیاب ہے بھی تو بہت مہنگے داموں لگائی جا رہی ہے۔ دوسری جانب سائنوفام ویکسین لگوانے والوں کوسعودی مملکت میں داخلے کی اجازت نہ ملنے پر سعودیہ میں افرادی قوت کی شدید کمی پیدا ہو گئی ہے۔اس صورت حال پر سعودی حکام نے بھی سر جوڑ لیے ہیں اور عالمی ادارہ صحت سے رابطہ کیا ہے کہ سائنو فام ویکسین لگوانے والوں کو بھی سعودیہ میں داخلے کی اجازت ہونی چاہیے۔ 8 مئی کو عالمی ادارہ صحت چینی سائنو فام ویکسین کی افادیت کوتسلی کر لیا ہے جس کے بعد امکان پیدا ہو گیا ہے کہ سعودی حکام کی جانب سے سائنو فام کو بھی منظور شدہ ویکسینز کی فہرست میں شامل کر لیا جائے گا۔جس کے بعد پاکستان سمیت دیگر ممالک میں سائنو فام لگوانے والے افراد ملازمت، عمرہ اور حج کی ادائیگی کی خاطر سعودی عرب جا سکیں گے۔ پاکستان میں گزشتہ چار ماہ سے سائنو فام ویکسین لگائی جا رہی ہے۔ دوسری جانب ریاض میں واقع پاکستانی سفارت خانے اور جدہ کے پاکستانی قونصل خانے کی جانب سے بھی سعودی حکام سے رابطہ کیا جا رہا ہے تاکہ انہیں سائنو فارم ویکسین منظور کرنے پر قائل کیا جا سکے۔اس معاملے میں پیش رفت ہونے کے بعد پاکستان میں سائنو فارم لگوانے والے سعودی عرب جا سکیں گے۔ سعودی حکومت کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ وہی اقامہ ہولڈرز اور عمرہ و حج عازمین مملکت میں داخل ہو سکیں گے جنہوں نے منظور شدہ کورونا ویکسینز میں سے کوئی ایک ویکسین کے دونوں انجکشن لگوا رکھے ہوں یا پہلا انجکشن لگوائے ہوئے 14 روز گزر گئے ہوں۔

ذرائع: اردو پوائنٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں