265

سعودیہ میں آنے والے سینکڑوں غیر ملکیوں کو ڈی پورٹ کرنے کا فیصلہ

ان غیر ملکیوں نے ہاؤس آئسولیشن کی پابندی نہ کرنے پر گرفتار کیا گیا ہے، سزا اور جرمانے کے بعد ڈی پورٹ کیا جائے گا

 چند روز قبل سعودی مملک آنے والے سینکڑوں سعودی اور غیر ملکی باشندوں کو ہاؤ س آئسولیشن اور قرنطینہ کی پابندی نہ کرنے پر گرفتار کر لیا ہے۔ ریاض پولیس کے ترجمان میجر خالد الکریدیس نے بتایا کہ مملکت میں پہنچنے والے 169 افراد میں کورونا کی تصدیق ہوئی تھی جس کے بعد انہیں ہدایت کی گئی تھی کہ وہ قرنطینہ میں رہیں۔تاہم ان افراد نے ہاؤس آئسولیشن اور کورونا سے متعلق ضوابط کی پابندی نہیں کی، جس کی وجہ سے انہیں گرفتار کر لیا گیا ہے۔ ان افراد کو پبلک پراسیکیوشن کے حوالے کیا گیا ہے جوانہیں جلد عدالت میں پیش کر کے کورونا ایس او پیز کی خلاف ورزی پر مقدمہ چلوائے گی۔ ملزمان کو عدالت سے قید کی سزا کے علاوہ بھاری جرمانہ بھی عائد ہوگا۔

ان افراد میں سے غیر ملکیوں کو قید اور جرمانے کے علاوہ مملکت سے ڈی پورٹ کرنے کی سزا بھی دی جائے گی اور انہیں بلیک لسٹ بھی کیا جائے گا جس کے بعد یہ افراد کبھی سعودی عرب نہیں آ سکیں گے۔سعودی قانون کے مطابق ان ملزمان کو 2 سال قید یا 2 لاکھ ریال جرمانے کی سزا ہو سکتی ہے۔ جبکہ بعض صورتوں میں دونوں سزائیں اکٹھی بھی دی جا سکتی ہیں۔ واضح رہے کہ سعودی حکومت کی جانب سے شہریوں اور غیر ملکیوں کو متنبہ کیاگیا ہے کہ مقررہ صحت ضوابط کے تحت کورونا متاثرہ شخص کو قرنطینہ یا آئسولیشن کی خلاف ورزی پرسخت سے سخت سزا دی جائے گی۔وزارت صحت کی جانب سے کورونا سے بچاو کے لیے احتیاطی تدابیرپرسختی سے عمل کرنے کی ہر ایک کو ہدایت کی جاتی ہے۔ایسے افراد جن کا کورونا ٹیسٹ مثبت آتا ہے انہیں دوہفتے کیلیے خود کو گھروں کی حد تک محدود رہنے کی ہدایت کی جاتی ہے۔کورونا متاثرہ افراد جنہیں قرنطینہ میں یاآئسولیٹ کیا گیا ہو ، ان کی مسلسل نگرانی کیلیے انہیں ڈیجیٹل کڑا بھی فراہم کیاجاتا ہے جبکہ وزارت کی تیارکردہ ایپ ’تباعد‘ اور ’صحتی‘ کے ذریعے بھی ایسے مریضوں کی نقل وحرکت کو مانیٹرکیاجاتا ہے۔متاثرہ افراد اگرعوامی مقام پرجاتے ہیں تو انکے بارے میں فوری طورپر ڈیجیٹل کڑا یا ’ایپ ‘ کنٹرول روم کو مطلع کردیتی ہے جہاں سے مذکورہ شخص کو انتباہ جاری کیاجاتا ہے اگروہ اس دوران اپنے آئسولیشن کے مقام پر واپس نہیں لوٹتا تو فوری طورپرقریبی پولیس موبائل کو اسکے بارے میں اطلاع فراہم کردی جاتی ہے۔وزارت صحت کی جانب سے کورونا سے بچاواور اس کے پھیلاو کو روکنے کیلیے مختلف قسم کے حفاظتی اقدامات کیے گئے ہیں تاکہ لوگوں کی صحت کے تحفظ کو یقینی بنایاجاسکے۔

ذرائع: اردو پوائنٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں