234

کویت: ہوائی آپریشنز مکمل بحال کئے جائیں، ٹریول و ٹورزم شعبے نے ایک بار پھر سے مطالبہ کر دیا

ہوائی آپریشنز مکمل بحال کئے جائیں، ٹریول و ٹورزم شعبے نے ایک بار پھر سے مطالبہ کر دیا۔

تفصیلات کے مطابق 67 فیصد آبادی کو ویکسین دی جاچکی ہے لیکن سفری پابندیاں ابھی سخت ہیں اور ان میں کوئی نرمی نہیں برتی جارہی۔ سیاحت اور سفر” کے شعبے کا مطالبہ ہے کہ غیرملکیوں کو ملک میں داخلے کی اجازت دی جائے اور سفری پابندیوں میں نرمی کی جائے تاکہ ائیرپورٹ کے آپریٹنگ ریٹ میں اضافہ ہوسکے۔ فیڈریشن آف ٹورزم اینڈ ٹریول آفس نے تصدیق کی ہے کہ کورونا وائرس کے پھیلاؤ کا مقابلہ کرنے کے لئے اٹھائے گئے حکومتی اقدامات کے اثرات

کویت میں سیاحت ، سفر اور ایوی ایشن کے شعبوں پر اب بھی منفی اثر ڈال رہے ہیں۔ 35 مسافروں پر آنے والی پرواز پر نشست کی گنجائش پر پابندیاں آپریٹنگ لفٹ کو اہل نہیں بنا رہی ہیں نیز صرف 35 مسافروں کی گنجائش کی پابندی سے واپسی پروازوں کی ٹکٹوں کی قیمتوں میں چار گنا اضافہ ہوا ہے۔ فیڈریشن آف ٹورزم اینڈ ٹریول آفس نے مزید کہا کہ ہم ویکسی نیشن کے آغاز کے بعد سے امید کررہے تھے کہ ہوائی اپریشن دوبارہ شروع ہوجائے گا لیکن ملک کی 67 فیصد آبادی کی ویکسی نیشن کے بعد بھی ٹورزم اینڈ ٹریول شعبے کی مشکلات ختم نہ ہوسکیں۔

یونین نے کہا کہ “اس سال بھی سفر کا موسم ضائع ہوچکا ہے اور صحت کی احتیاطی ضروریات کو بروئے کار لانے کے سبب مسافروں کی نقل و حرکت محدود ہوگئی ہے۔ کویت جانے والے صارفین اور مسافر دوسری مارکیٹوں کے لئے ایک بہت بڑا معاشی موقع بن چکے ہیں لیکن اب کویت میں کوئی فائدہ نہیں ہے۔ مقامی طور پر بحران کی بدانتظامی کے باعث قومی معیشت پر سخت منفی اثرات مرتب ہورہے ہیں۔

انہوں نے وضاحت کی کہ معاملہ یہیں نہیں رکا بلکہ ہوائی اڈے پر دستیاب آپریشنل صلاحیت کے منفی استعمال کو پہنچا کیونکہ مسافروں کی اصل تعداد روزانہ اوسطا 2000 مسافر ہے لیکن کئی وجوہات کی بناء پر اس میں اضافہ نہیں کیا جاسکتا جن میں چند وجوہات درج ذیل ہیں:

  • کویت آنے والی ہر پروازوں کے لئے 35 مسافروں کی نشست کی گنجائش پر پابندیاں عائد کردی گئیں ہیں جس نے ٹکٹ کے نرخوں کو معمول سے 4 گنا کردیا ہے جو سفر کرنے کے خواہشمند افراد کے لئے انتہائی اضافی لاگت کا حامل ہے۔
  • رہائشیوں کو ملک میں داخلے کی اجازت نہ دینا اور صرف شہریوں کا نقل و حرکت تک محدود رہنا جو ایک غیر منطقی عمل ہے جو صحت کی ضروریات سے منسلک نہیں ہے جس کی وجہ سے ہوائی اڈے پر نقل و حرکت میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے کیونکہ تمام قومیتوں کے رہائشیوں کو لازمی طور پر داخل ہونے کی اجازت دی جانی چاہئے جیسا کہ ممالک میں کیا جارہا ہے۔

یونین نے مزید کہا کہ وزارت صحت نے شہریوں اور رہائشیوں کی ویکسی نیشن کی شرح کو تقریبا 67 فیصد تک مکمل کرلیا ہے۔ دنیا کے کئی ممالک نے سفری پابندیوں کو کم کردیا ہے لیکن ہمارے پاس کویت میں رہائشیوں کے لئے ملک میں داخلہ بند ہوگیا ہے وہ سفر نہیں کرسکتے ہیں جبکہ یہ بتانے کی ضرورت نہیں کہ طریقہ کار کی لمبائی اور رکاوٹوں نے بہت سے شہریوں کو بھی سفر کرنے سے خوفزدہ کردیا ہے۔

یونین نے مزید کہا کہ “اگر کرونا بحران ختم بھی ہو گیا تو “کویت مسافر” پلیٹ فارم کی پریشانی جو شہریوں اور رہائشیوں کے لئے سفر کرنے میں سب سے بڑی رکاوٹ بن چکی ہے ختم نہیں ہوگی۔”

ایوی ایشن کی جنرل ایڈمنسٹریشن کے اعلان کے باوجود “پلیٹ فارم پر کچھ طریقہ کار کا جائزہ لینے کے بعد مسافر سے درکار کچھ ڈیٹا اور معلومات کو آسان بنانا شروع کیا جائے گا اور صحت کی ضروریات کو تعصب کے بغیر اور صحت کے نظام کی حفاظت کے تقاضوں کے مطابق سہولت فراہم کی جائے گی مسافروں نے گذشتہ دنوں میں بھی پریشانی ظاہر کی کیونکہ مسافروں نے ان تمام سہولیات کے بعد بھی پلیٹ فارم سے اطمینان کا اظہار نہیں کیا۔

فیڈریشن آف ٹورزم اینڈ ٹریول آفس نے وضاحت کی کہ پلیٹ فارم کے ذریعے کویت آنے والے PCR ٹیسٹوں کے لئے فیس کی محدود ادائیگی سے بہت سارے شہریوں کی نقل و حرکت محدود ہوگئی ہے کیونکہ پلیٹ فارم کے ذریعے صرف ایک ہی ادائیگی کے آپشن کی دستیابی سے جس سے شہریوں کے سفری منصوبوں پر منفی اثر پڑتا ہے لیکن اگر سول ایوی ایشن کی جنرل ایڈمنسٹریشن “کاؤنٹر” پر نقد یا بینک کارڈ کے ذریعہ ویلیو چیک کی ادائیگی کا آپشن فراہم کرنے کے لئے کوئی طریقہ کار وضع کرے تو اسطرح “کویت مسافر” کے ذریعہ ہونے والی رکاوٹوں کو کم کیا جاسکتا ہے۔

ذرائع: کویت اردو نیوز

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں