356

کویتی پارلیمنٹ میں ہنگاموں اور ہاتھا پائی کے دوران بجٹ منظور ہو گیا

اپوزیشن اور سرکاری ممبران گتھم گتھا ہو گئے، سیکیورٹی اہلکار وں کو طلب کرنا پڑا

 کویت میں گزشتہ کچھ عشروں سے پارلیمنٹ میں ہاتھا پائی اور مار پیٹ کے واقعات تواتر سے پیش آ رہے ہیں، جو دُنیا بھر کے اخبارات اور الیکٹرانک میڈیا کی خبروں کی زینت بنتے ہیں۔ کویتی مملکت میں ایک بار پھر پارلیمنٹ میں شدید ہنگامہ آرائی، ہاتھا پائی اور تلخ کلامی کے مناظر سامنے آ گئے ہیں۔ اُردو نیوز کے مطابق گزشتہ روز کویت کے اگلے قومی بجٹ کی منظوری دے دی گئی۔تاہم اس موقع پر انتہائی تشدد آمیزماحول بنا رہا۔بجٹ اجلاس کے دوران ارکان پارلیمنٹ کے درمیان ہاتھا پائی کی نوبت آگئی۔پارلیمانی فورس کو اس وقت مداخلت کرنا پڑی جب اپوزیشن اور سرکاری ممبران سے گتھم گتھا ہوگئے۔ 32 ارکان پارلیمنٹ نے بجٹ کے حق میں ووٹ ڈالا۔ 30 ممبران پارلیمنٹ ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا۔

اجلاس کے دوران اپوزیشن ممبران نے وزرا کی نشستوں پر قبضہ کرلیا۔کویتی پارلیمنٹ کے سپیکر مرزوق الغانم نے بجٹ پر بحث کے لیے پارلیمنٹ کا خصوصی اجلاس طلب کیا تھا۔اجلاس کے دوران کویتی وزرا پارلیمنٹ ہال کے دروازے پر کھڑے رہے کیونکہ اپوزیشن ممبران ان کی نشستوں پر قابض تھے۔ بعض ارکان نے بجٹ پر بحث کو معطل کرنے کے لیے ڈیسک بھی بجائے۔کویتی حکومت اور پارلیمنٹ کے درمیان گزشتہ کئی عشروں سے اختلافات چلے آرہے ہیں۔یکے بعد دیگرے کئی حکومتیں تبدیل ہوچکی ہیں اور پارلیمنٹ تحلیل ہوئی ہے۔ اس صورتحال کی وجہ سے ملک میں اصلاحات اور سرمایہ کاری کا ماحول متاثر ہوا ہے۔ارکان پارلیمنٹ وزیراعظم صباح خالد الحمد الصباح سے مارچ میں جاری کردہ ان کے فیصلے کی آئینی حیثیت پر جواب طلب کررہے ہیں جس کے تحت انہوں نے 2022 کے ا?خر تک اپنی جواب طلبی ملتوی کردی تھی۔ علاوہ ازیں بدعنوانی جیسے مسائل پر بھی اپوزیشن کی جانب سے جواب طلب کیے جارہے ہیں۔ 

ذرائع: اردو پوائنٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں