1,235

کویت میں رہنے والے پاکستانیوں اور دیگر غیرملکیوں کیلئے بری خبر آگئی

خلیجی ملک کے نجی اور ماڈل ہاؤسنگ علاقوں میں رہنے والے غیر کویتی خاندانوں کو ممنوع قرار دینے کا مطالبہ کردیا گیا

کویت میں رہنے والے پاکستانیوں اور دیگر غیرملکیوں کیلئے بری خبر ہے کہ خلیجی ملک کے نجی اور ماڈل ہاؤسنگ علاقوں میں رہنے والے غیر کویتی خاندانوں کو ممنوع قرار دینے کا مطالبہ کردیا گیا ۔ مقامی میڈیا کے مطابق کویت کے دارالحکومت کے گورنر شیخ طلال الخالد کی جانب سے نجی اور ماڈل ہاؤسنگ علاقوں میں رہنے والے غیر کویتی خاندانوں کو ممنوع قرار دینے اور ایسے مقدمات کا فیصلہ کرنے کے لیے میونسپل کورٹ قائم کرنے کا مطالبہ کیا ہے ، جس کے لیے 1992 کے حکم نامے کے قانون نمبر 125 میں ترمیم کا بھی کہا گیا ہے۔اس ضمن میں گورنر نے وزیر بلدیات شائع الشیعہ کو لکھے گئے ایک خط میں کہا ہے کہ ہماری میں حکمنامہ قانون میں ترمیم کے ذریعے تارکین وطن خاندانوں کے لیے نجی اور ماڈل ہاؤسنگ علاقوں میں رہائش کی ممانعت کی گئی ہے کیوں کہ ترمیمی تجویز کے مطابق اس میں موجود کچھ شقوں کو دوبارہ ترتیب دیا جائے گا تاکہ غیر ملکی خاندانوں کے نجی اور ماڈل ہاؤسنگ علاقوں میں رہائش پر پابندی لگائی جا سکے کیوں کہ ماڈل ایریاز کویتی معاشرے سے جڑے مختلف سماجی رسوم و رواج اور اس کے تانے بانے کے اتحاد کی وجہ سے کویتی قومی شناخت اور رازداری کے معاملے میں شہریوں کے مصائب کے لیے خطرہ بن رہے ہیں۔خط میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اس مسئلے سے منسلک دیگر منفیات بھی ہیں جو کہ جائیداد کی قیمتوں میں اضافہ ہے کیوں کہ تارکین وطن کویت کے لیے یا مطلوبہ علاقوں میں رہائش گاہیں لیتے ہیں تاکہ خدمات کے لیے حکومتی امداد میں کمی کے فوائد سے فائدہ اٹھایا جا سکے جس سے کچھ رئیل اسٹیٹ مالکان کے استحصال اور لالچ کے نتیجے میں سرکاری خزانے کو بھاری رقوم کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

ذرائع: اردو پوائنٹ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں